Connect with us
Monday,28-September-2020

(جنرل (عام

سپریم کورٹ نے معاملہ جوں کا توں رکھنے کا دیا حکم، ممبئی میٹرو کاکام جاری رکھنے کا فیصلہ

Published

on

آرے کالونی میں درخت کاٹنے پر سپریم کورٹ کی روک کے بعد ممبئی میٹرو ریل کارپوریشن نے بیان دیا ہے کہ ان کے پاس تو ۲۱۸۵؍درخت کاٹنے کی اجازت تھی
ممبئی :سپریم کورٹ نے پیر کے روز ممبئی کی آرے کالونی میں میٹرو پروجیکٹ کے لیے درخت کاٹنے پر روک لگا دی، لیکن ایسا محسوس ہوتا ہے کہ سپریم کورٹ کا یہ فیصلہ آنے میں کافی تاخر ہو گئی، کیونکہ ممبئی میٹرو ریل کارپوریشن نے کہا ہے کہ وہ معاملہ عدالت میں پہنچنے تک 2141 درخت کاٹ چکا ہے۔سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ممبئی میٹرو کے ترجمان نے کہا کہ اب مستقبل میں مزید درخت نہیں کاٹے جائیں گے۔ حالانکہ کاٹے گئے درختوں کو ہٹا کر جگہ صاف کرنے اور دیگر تعمیری کام جاری رکھنے کی بات بھی کہی گئی ہے۔ ترجمان نے کہا کہ “ہم سپریم کورٹ کے حکم کی عزت کرتے ہیں اور اب آرے مِلک کالونی میں کار شیڈ سائٹ کے آس پاس کوئی درخت نہیں کاٹا جائے گا۔اس سے قبل سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران سالیسیٹر جنرل نے کہا تھا کہ میٹرو کو جتنے درخت کاٹنے تھے، اتنے کاٹ لیے گئے ہیں۔ اس پر عرضی دہندہ کے وکیل سنجے ہیگڑے نے عدالت کے سامنے اندیشہ ظاہر کیا کہ کٹے ہوئے درختوں کو ہٹانے کے نام پر مزید درخت کاٹے جا سکتے ہیں، اس پر عدالت نے جوں کا توں حالت برقرار رکھنے کا حکم دیا۔ لیکن میٹرو کے بیان سے لگتا ہے کہ سپریم کورٹ کے ذریعہ جوں کا توں حالت برقرار رکھنے کے حکم کو اس نے اہمیت نہیں دی ہے۔ اسی لیے میٹرو نے کہا ہے کہ نئے درخت کاٹے نہیں جائیں گے اور کٹے ہوئے درختوں کو ہٹانے کے ساتھ ہی شیڈ بنانے کا کام شروع کیا جائے گا۔
واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے سوموار کو ممبئی کی آرے کالونی میں درختوں کی کٹائی پر روک لگا دی تھی اور مہاراشٹر حکومت کو حکم دیا تھا کہ اگلی سماعت تک وہ اس معاملے میں موجودہ حالات کو بنائے رکھیں۔ معاملے کی اگلی سماعت 21 اکتوبر کو فاریسٹ بنچ کے سامنے ہوگی۔غور طلب ہے کہ قانون کے طالب علموں کے ایک گروپ کے ذریعے اس بارےمیں چیف جسٹس رنجن گگوئی کو لکھے گئے خط کے بعد یہ دو ججوں کی بنچ تشکیل کی گئی تھی۔ اس سے پہلے آرے کالونی میں درختوں کی کٹائی پر روک لگانے کی مانگ کو لےکر بامبے ہائی کورٹ پہنچے لوگوں کی عرضی کو کورٹ نے خارج کر دیا تھا۔سپریم کورٹ میں اس معاملے میں سینئر وکیل سنجےہیگڑے اور گوپال شنکرنارائنن نے درخواست گزاروں کی پیروی کی۔ انہوں نے کورٹ کو بتایا کہ آرے جنگل ہے یا نہیں، ابھی یہ معاملہ سپریم کورٹ کے سامنے زیر التوا ہے۔ اس کے علاوہ این جی ٹی اس معاملے پر غور کر رہی ہے کہ آرے علاقہ ایکو۔سینسٹو ہے یا نہیں۔انہوں نے کہا کہ اس لئے انتظامیہ کو فیصلہ آنے تک آرے کالونی کے درختوں کو نہیں کاٹنا چاہیے تھا۔
اس سے پہلے جمعہ کو بامبے ہائی کورٹ کے دو ججوں چیف جسٹس پردیپ نندراجوگ اور جسٹس بھارتی ڈانگرے کی بنچ نے درختوں کی کٹائی پر روک لگانے کے بارے میں این جی او اور ماہرِ ماحولیات کے ذریعے دائر کی گئی پانچ عرضیوں کو خارج کر دیا تھا۔گزشتہ جمعہ کو بامبے ہائی کورٹ سے فیصلہ آنے کے بعد رات کو نو بجے سے دو گھنٹے کے اندر ایم ایم آر سی ایل نے الیکٹرک مشین سے 450 درختوں کو کاٹ دیا تھا۔ حالانکہ مقامی لوگوں کے ذریعے مخالفت کے بعد کچھ دیر تک اس عمل کو روک دیا گیا تھا۔ لیکن بعد میں پولیس کی مدد سے سنیچر رات نو بجے تک آرے کالونی کے تقریباً 2134 درختوں کو کاٹ دیا گیا۔ممبئی پولیس نے آرے کالونی میں درختوں کی کٹائی کو لےکر ہوئے مظاہرہ کے بیچ سنیچر کی صبح کالونی اور اس کے آس پاس کے علاقوں میں سی آر پی سی کی دفعہ 144 نافذ کر دی تھی، جس کے بعد 29 لوگوں کو گرفتار کیا گیا۔ سپریم کورٹ نے یہ بھی حکم دیا کہ اس معاملے کو لےکر گرفتار کئے گئے تمام مظاہرین کو رہا کیا جائے۔ اس پر بھروسہ دلاتے ہوئے سالیسٹر جنرل تشار مہتہ نے کہا، ‘ اگر کسی کو ابھی تک رہا نہیں کیا گیا ہے تو ان کو فوراً رہا کیا جائے گا۔دریں اثناء آرے کالونی میں درختوں کی کٹائی کا معاملہ سپریم کورٹ پہنچ گیا ہے، جس پر آج سماعت ہوگی ۔ سپریم کورٹ رجسٹری کی جانب سے جاری ایک نوٹس میں اس بات کی معلومات دی گئی ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ عدالت نے قانو ن کے طالب علم رشبھ رنجن کے خط کو مفاد عامہ کی عرضی میں بدل کر اس کی آج سماعت کے لئے خصوصی بینچ تشکیل دی ہے ۔ بینچ صبح 10 بجے اس معاملے کی سماعت کرے گی ۔ قانون طالب علم نے خط میں لکھا ہے کہ بامبے ہائی کورٹ نے آرے کے درختوں کو جنگل کے زمرے میں رکھنے سے انکار کر دیا اور درختوں کی کٹائی سے متعلق عرضیاں مسترد کر دیں ۔ اس کا کہنا ہے کہ حکومت بہت جلد بازی میں یہ فیصلہ لے رہی ہے ۔ واضح ر ہے کہ آرے میں کل 2700 درخت کاٹے جانے کا منصوبہ ہے، جن میں سے 1،500 درختوں کو گرا دیا ہے ۔میٹرو شیڈ کے لئے آرے کالونی کے درختوں کی کٹائی کی مخالفت سماجی اور ماحولیاتی کارکنوں کے ساتھ کئی معروف شخصیات کر رہی ہیں ۔

سیاست

سنجے راوت اور دیوندر فڑنویس کی ملاقات کے بعد مہاراشٹر کی سیاست میں ہلچل، وزیر اعلی کی سرکاری رہائش گاہ پر شرد پوار اور ادھو ٹھاکرے کی ملاقات

Published

on

(محمدیوسف رانا)
مہاراشٹر کے سابق وزیر اعلی دیوندر فڑنویس اور شیوسینا کے ترجمان سنجے راوت کے مابین ہونے والی ملاقات مہا وکاس آگھاڑی کے لیڈران کے ساتھ مہاراشٹر میں سیاسی سرگرمیاں تیز ہوگئی ہیں۔
اپوزیشن لیڈر دیوندر فڑنویس اور شیوسینا کے ترجمان سنجے راوت کی گزشتہ دنوں ہونے والی ملاقات سے ریاست مہاراشٹر کی سیاست میں ہلچل پیدا ہوگئی ہے۔ اس ملاقات کے بعد آج سرکاری رہائش گاہ’’ ورشا‘‘ پر ہنگامی طور پر این سی پی کے سینئر لیڈر شرد پوار اور ریاستی وزیر اعلی ادھوٹھاکرے کے مابین ہونے والی میٹنگ تقریباً کم و بیش ایک گھنٹے تک گفتگو کا سلسلہ جاری رہا۔ اس ملاقات میں کون کون سے موضوعات زیر بحث تھے؟ سنجے راوت اور دیویندر فڑنویس ملاقات کے بعد پیدا ہونے والی مہا وکاس آگھاڑی میں بے چینی کے تدارک کے لئے کیا لائحہ عمل ترتیب دیا گیا؟
تادم تحریر وزیر اعلی ادھوٹھاکرے اور شرد پوار کے درمیان وزیر اعلی کی سرکاری رہائش گاہ ورشا پر ہونے والی میٹنگ میں کیا کیا باتیں ہوئیں یہ معلوم نہیں ہوسکیں۔
سیاسی حلقوں میں یہ ملاقات اس شدت سے محسوس کی گئی کہ شیوسینا کے ترجمان کو وضاحت کرنا پڑی کہ ‘میں نےسابق وزیر اعلی دیویندر فڑنویس سے ملاقات کی جس میں کچھ امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔وہ مہاراشٹر میںاپوزیشن لیڈر ہیں اور بہار میں ہونے والے انتخابات میں بی جے پی کے انچارج بھی ہیں۔ہمارے درمیان نظریاتی اختلافات ہوسکتے ہیں لیکن ہم دشمن نہیں ہیں۔ اس ملاقات سے مہاراشٹر کے وزیر اعلی ادھو ٹھاکرے بھی واقف تھے۔یہ ملاقات صرف اور صرف سامنا میں انٹرویو کے لئے کی گئی۔اتنا ہی میں آج اپوزیشن لیڈر دیوندر فڑنویس کو بھی وضاحتی بیان جاری کرنا پڑا انہوں نے کہا کہ سنجے راوت جی چونکہ شیوسینا کے ترجمان کے ساتھ سامنا کےایڈیٹر بھی ہیں اس لئے وہ میرا انٹرویو لینا چاہتے اس ملاقات میں کسی بھی سیاسی پہلو پر گفتگو نہیں ہوئی ہے۔
سنجے راوت اور دیویندر فڑنویس کی ملاقات پراپنا موقف واضح کرتے ہوئے مہاراشٹر بی جے پی کے چیف ترجمان کیشیو اپادھیائے نے کہا کہ اس میٹنگ کا کوئی سیاسی نقطہ نظر نہیں ہے۔ انہوں نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ ‘راوت دیویندر فڈنویس کا شیوسینا کے ترجمان سامناکے لئے انٹرویو کرنا چاہتے ہیں۔ بس یہی دونوں رہنماؤں کے درمیان ملاقات کا باعث بنا۔ انہوںنے مزیدکہاکہ فڑنویس نے راؤت کو بتایا تھا کہ جب وہ بہار کی انتخابی مہم سے واپس آئیں گے تو وہ انٹرویو دیں گے۔
واضح رہے مہاراشٹر میں شیوسینا لیڈر سنجے راوت بی جے پی پر مسلسل حملہ کرتے ہیں۔ پھرچاہے یہ شاعری کے انداز میں ہو یا شیو سینا کے قلم کے ذریعے۔ ایسی صورتحال میں دونوں کی ملاقات
پرطرح طرح کی قیاس آرائیاں کی جارہی ہیں۔
شیوسینا،این سی پی اور کانگریس کے علاوہ دوست پارٹیوں نے ملک کر مہا وکاس آگھاڑی بنا کر اس کے زیر نگراں مہاراشٹر میں حکومت سازی کر رہے ہیں مگر روز اول سے ہی ان کے مابین جاری ہونے والے تنازعات ختم کا نام نہیں لے رہے ہیں۔
اب ہفتہ کے روز مہاراشٹر کے سابق وزیر اعلی دیویندر فڑنویس اور شیوسینا کے ممبر پارلیمنٹ سنجے راوت نے ملاقات موضوع بحث بنی ہوئی ہے۔
یاد رہے شیوسینا اور بی جے پی نے۲۰۱۹؍ کےمہاراشٹر اسمبلی انتخابات اتحاد بنا کر ساتھ ساتھ لڑے لیکن اقتدار کی تقسیم پر دونوں اتحادیوں کے مابین اختلافات ہوگئے۔ دونوں پارٹیوں کے مابین پاور شیئرنگ فارمولہ پر اتفاق نہیں ہوسکا اس لئے شیوسینا نے مہاراشٹر کا اقتدار حاصل کرنے کے لئےایک انوکھا راستہ اختیار کرتے ہوئے این سی پی اور کانگریس سے ہاتھ ملایااور مہا وکاس آگھاڑی بنا کر اقتدار حاصل کر لیا اس اتحاد کو یقینی بنانے میںشرد پوار اور سنجے راوت دنوں نے اہم کردار ادا کیے تھے۔

Continue Reading

سیاست

شیوسینا کے ساتھ ہاتھ ملانے کا کوئی ارادہ نہیں: فڈنویس

Published

on

اتوار کے روز مہاراشٹرا کے سابق وزیر اعلی دیویندر فڈنویس نے کہا کہ بی جے پی کا شیوسینا کے ساتھ ہاتھ ملانے یا ریاست میں ادھو ٹھاکرے کی زیرقیادت مخلوط حکومت کا خاتمہ کرنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔ فڈنویس نے یہاں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے دعوی کیا کہ ریاست کے لوگ شیوسینا کی زیرقیادت ‘مہاراشٹر وکاس آگھاڈی’ حکومت کے کام سے ناخوش ہیں اور اس کی اس ‘تعصب’ کی وجہ سے وہ گر پڑے گی۔
بی جے پی کے سینئر رہنما نے یہ بھی کہا کہ انہوں نے ہفتہ کے روز شیوسینا کے رکن پارلیمنٹ سنجے راؤت سے ملاقات کی، جس نے شیو سینا کے ترجمان ‘سامنا’ کے انٹرویو کے سلسلے میں سیاسی راہداریوں میں قیاس آرائیوں کو جنم دیا۔ اہم بات یہ ہے کہ گذشتہ سال مہاراشٹر اسمبلی انتخابات کے بعد، شیوسینا نے وزیر اعلی کے عہدے کو بانٹنے کے معاملے پر بی جے پی سے اپنے تعلقات توڑ دیے تھے۔
اس کے بعد ادھو ٹھاکرے کی زیرقیادت پارٹی نے نیشنلسٹ کانگریس پارٹی اور کانگریس کے ساتھ مل کر ریاست میں مخلوط حکومت تشکیل دی۔ ریاستی اسمبلی میں حزب اختلاف کے رہنما، فڈنویس نے کہا، “ہمارا شیوسینا سے ہاتھ ملانے یا ریاست (حکومت میں) گرانے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔” ہم دیکھیں گے کہ جب یہ خود ہی گر جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ راوت سے ان کی ملاقات کا کوئی سیاسی اثر نہیں ہے۔ بی جے پی رہنما نے کہا، “انہوں نے مجھ سے ‘سامنا’ کے لئے ایک انٹرویو دینے کو کہا، جس سے میں اتفاق کرتا ہوں۔ لیکن میرے بھی اپنے شرائط تھے – گویا انٹرویو میں اکٹھا ہونا چاہئے اور مجھے انٹرویو کے دوران اپنا کیمرہ رکھنے کی اجازت ہے۔ “دریں اثنا، راوت نے یہاں صحافیوں سے بھی الگ الگ گفتگو کی۔ شیوسینا رہنما نے کہا کہ وہ اور فڈنویس دشمن نہیں ہیں اور وزیر اعلی ٹھاکرے اس اجلاس سے آگاہ ہیں، جس کو انٹرویو کے شیڈول پر تبادلہ خیال کرنے کا پہلے سے منصوبہ بنایا گیا تھا۔ تاہم، کانگریس کے رہنما سنجے نیروپم نے راوت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے یہ الزام عائد کیا کہ انہیں سرخیاں بنانے میں جلدی ہے۔ ممبئی کانگریس کے سابق چیف نے کہا، “جب یہ ہوتا تب سیاسی کیریئر ختم ہوجاتا ہے۔”
راوت کے لئے یہ میری بد قسمتی نہیں ہے بلکہ یہ ایک حقیقت ہے۔ گذشتہ سال لوک سبھا انتخابات سے قبل ممبئی کانگریس کے چیف کے عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد سے ناخوش رہنے والے نیروپم نے کہا ہے کہ اگر پارٹی (کانگریس) حال ہی میں پارلیمنٹ میں منظور شدہ زرعی بلوں کی مخالفت کرنے میں سنجیدہ ہے تو اسے پہلے مہاراشٹر جانا چاہئے۔ مجھے حکمران شیوسینا سے اپنا موقف واضح کرنے کو کہنا چاہئے۔انہوں نے کہا کہ کانگریس اور این سی پی نے کہا ہے کہ وہ اس نئی قانون سازی کو مہاراشٹر میں نافذ نہیں ہونے دیں گے جب کہ وزیر اعلی ٹھاکرے نے اس پر ایک لفظ بھی نہیں کہا ہے۔ نیروپم نے کہا، “شیوسینا نے لوک سبھا میں زرعی بلوں کی حمایت کی، جبکہ انہوں نے راجیہ سبھا سے ایسے وقت میں بات کی جب ایوان بالا کی دیگر اپوزیشن جماعتیں اس پر ووٹ کا مطالبہ کررہی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کو ریاستی حکومت کے اس موقف کے بارے میں الجھن ہے۔

Continue Reading

جرم

مالیگاؤں میں جواں سال لڑکی کی دردناک خودکشی سے سنسنی

Published

on

(خیال اثر)
مسجدوں میناروں کے شہر مالیگاؤں میں روز بروز خودکشی کے واقعات رونما ہورہے ہیں. معمولی گھریلو تنازعات , خانگی معاملات میں ناکامی اور مالی پریشانیاں بھی آئے دن کی خودکشی کا سبب بن رہی ہیں. ایسا ہی ایک دلدوز واقعہ آج بروز سنیچر تقریباً 12بجے مالدہ شیوار گٹ نمبر 178/1 مضافاتی علاقہ ہوٹل لبیک کے پچھے گھر والوں کی غیر موجودگی میں ایک 16سالہ لڑکی عائشہ شیخ محبوب نے پھانسی لگا کر خودکشی کرلی. بتایا جاتا ہے کہ گھر کے تمام افراد کام پر گئے ہوئے تھے اور لڑکی کی والدہ بازار گئی ہوئی تھی تبھی یہ واقعہ پیش آیا. سماجی کارکن شفیق انٹی کرپشن نے موقع واردات پر پہنچ کر نعش کو جنرل ہاسپٹل روانہ کرتے ہوئے قانونی نقاط کی تکمیل میں تعاون پیش کیا.
لڑکی کے قرب و جوار میں رہنے والوں کا کہنا ہے کہ لڑکی اور اس کے اہل خانہ کے حالات ٹھیک تھے. انھیں کوئی پریشانی کا سامنا نہیں تھا پھر بھی لڑکی نے یہ سنگین قدم کیوں اٹھایا محمکہ پولیس اس کی تفتیش میں مصروف ہے. شہر میں خودکشی کے بڑھتے واقعات شہری ذمہ داران سوچنے پر مجبور کررہے ہیں کہ آخر کیا وجہ ہے جو روز بروز خودکشی کے واقعات بڑھتے جارہے ہیں. اسی طرح شہر کے مخیر حضرات کو بھی چاہئے کہ وہ نہ صرف اپنے محلہ بلکہ خاص طور پر مضافاتی علاقوں میں رہنے والوں کی بھی مالی اعانت کا فریضہ انجام دیں. اگر غریب خاندانوان کو کسی قسم کی مالی پریشانیاں ہیں تو اس کا سدباب کریں تبھی ایسے دلدوز واقعات پر قدغن لگ سکتی ہے ورنہ آنے والے وقتوں میں مسجدوں میناروں کا یہ شہر خودکشی کی آمجگاہ بن جائے گا اور آئے دن کسی نا کسی محلے, گلیوں سے خودکشیوں کی خبریں منظر عام پر آتی رہیں گی-

Continue Reading
Advertisement

رجحان

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com