Connect with us
Saturday,26-September-2020

قومی

چنئی سپر کنگ کو روکنا کولکتہ نائیٹ رائیڈرز کے لئے ایک بڑا چیلنج

Published

on

زبردست فارم میں چل رہے مہندر سنگھ دھونی اور ان کی گزشتہ چمپئن ٹیم چنئی سپر کنگ کو اتوار کو ایڈن گاڑڈن میں ہونے والے آئی پی ایل -12 کے مقابلے میں روکنا کولکتہ نائیٹ رائیڈرز کے لئے ایک بڑا چیلنج ہوگا۔
چنئی اب تک سات میچوں میں سے چھ جیت کر 12 پوائنٹس کے ساتھ ٹیبل میں سب سے اوپر ہے جبکہ کولکتہ سات میچوں میں تین ہار کر آٹھ پوائنٹس کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہے۔
کولکاتا کو جمعہ کو اپنے ہی میدان میں دہلی کیپٹلس سے سات وکٹ سے شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا جبکہ چنئی نے اس سے ایک دن پہلے جے پور میں راجستھان رائلس کو آخری گیند پر چار وکٹ سے شکست دی تھی
چنئی سپر کنگ کو روکنا کولکتہ نائیٹ رائیڈرز کے لئے ایک بڑا چیلنج

قومی

اظہر الدین کا گنگولی کو بطور کپتان تیار کرنے میں اہم کردار : لطیف

Published

on

Sorbh-Ganguly-&-Muhammad-Az

پاکستان کے سابق کپتان راشد لطیف نے محمد اظہرالدین کی تعریف کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہندستانی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان محمد اظہرالدین نے سوربھ گنگولی میں قائدانہ صلاحیتیں پیدا کرنے اور نکھارنے میں اہم کردار ادا کیا تھا اور کپتانی کے معاملے میں گنگولی کامیابی کا کریڈٹ اظہر الدین کو جاتا ہے اور اس روایت میں ہندوستانی کرکٹ کو مہندر سنگھ دھونی جیسا کپتان حاصل کرنے میں مدد ملی۔
انٹرنیشنل کرکٹ سے حال ہی میں ریٹائر ہونے والے سابق کپتان ایم ایس دھونی کی تعریف کرتے ہوئے لطیف نے 90 کی دہائی میں اظہرالدین کی تیار کردہ ثقافت کے بارے میں بات کی۔یوٹیوب چینل کاٹ بیہائنڈ میں لطیف نے کہا کہ میں محمد اظہرالدین کا بہت احترام کرتا ہوں۔ انہوں نے طویل عرصہ تک ہندوستانی کرکٹ کی خدمت کی اور پھر اس کے بعد سوربھ گنگولی جیسے کپتان کی میراث چھوڑی۔ گنگولی کو بطور کپتان تیار کرنے میں اظہر کا اہم کردار تھا۔ سچن تندولکر اور راہل دراوڑ جیسے لیجنڈری کھلاڑی گنگولی کی کپتانی میں کھیلے۔ گنگولی نے 1992 میں ون ڈے ڈیبیو کیا تھا اور 1996 میں ٹیسٹ ڈیبیو کیا تھا۔ اظہرالدین دونوں موقعوں پر ہندوستانی ٹیم کے کپتان تھے۔ گنگولی نے اظہر کی کپتانی میں 12 ٹیسٹ اور 53 ون ڈے میچ کھیلے۔
پاکستان کے سابق وکٹ کیپر بیٹسمین لطیف نے کہا کہ دھونی کی کپتانی میں گنگولی اور اظہر دونوں کی کپتانی کی خصوصیات ہیں۔لطیف نے کہا کہ گنگولی کو کپتان کی حیثیت سے تیار کرنے کا اظہرالدین کو بہت زیادہ کریڈٹ ملنا چاہئے۔ اسی کے ساتھ ہی گنگولی نے دھونی کے کیریئر کی تیاری میں بھی اہم کردار ادا کیا۔لطیف نے کہا کہ محمد اظہرالدین نے گنگولی کو تیار کیا اور دھونی نے اظہرالدین اور گنگولی کی خوبیوں کو سمجھ کر جدید کرکٹ کے مطابق اپنا انداز ڈیزائن کیا۔ انہیں اپنی ٹیم کے میچ جیتنے پر اعتماد تھا۔ دھونی نے ٹیم میں جیتنے والی ذہنیت کو جنم دیا۔
دھونی کی کپتانی کے بارے میں بات کرتے ہوئے لطیف نے کہا کہ دھونی قائد تھے۔ انہوں نے نوجوان کرکٹرز کی حمایت کی اور انہیں اعتماد دیا۔لطیف نے کہا کہ دھونی نے ورلڈ کپ کے تین ٹائٹل جیتے۔ کسی اور کپتان نے یہ کارنامہ انجام نہیں دیا ہے۔ دھونی جیسے کپتان خطرہ مول لیتے ہیں اور اپنی ٹیم کو آگے لے جاتے ہیں۔ دھونی نے نوجوان کھلاڑیوں کو ترقی دی۔ انہوں نے اپنے کردار کے مطابق کرکٹرز کو ڈھالا۔ ایسے کپتان اپنے کھلاڑیوں میں اعتماد پیدا کرتے ہیں۔

Continue Reading

قومی

یوراج ریٹائرمنٹ سے باہر آنے کے لئے بے تاب

Published

on

بین الاقوامی کرکٹ سے ریٹائر ہونے والے آل راؤنڈر یوراج سنگھ ریٹائرمنٹ سے نکل کر ڈومیسٹک کرکٹ کم سے کم پنجاب کے لئے ٹی ٹوئنٹی کھیلنا چاہتے ہیں۔
یوراج جون 2019 میں کرکٹ کے تمام فارمیٹس سے ریٹائر ہوگئے تھے لیکن ریٹائرمنٹ کے ایک سال کے بعد ان کی خواہش ہے کہ وہ دوبارہ میدان میں داخل ہوں۔
2011 کے ورلڈ کپ کے مین آف دی ٹورنامنٹ یوراج نے گذشتہ چند مہینوں میں موہالی کے پی سی اے اسٹیڈیم میں پنجاب کے نوجوان کھلاڑیوں شبھمن گل ، ابھیشیک شرما ، پربھاسمرن سنگھ اور انمول پریت سنگھ کے ساتھ وقت گزارا اور اسی دوران ان میں واپسی کی خواہش جاگی ہے۔

Continue Reading

قومی

ٹینس کھلاڑی ثانیہ مرزا کی چار سال کے طویل وقفے کے بعد ٹیم میں واپسی

Published

on

ہندوستان کی سب سے زیادہ کامیاب خاتون ٹینس کھلاڑی ثانیہ مرزا کی چار سال کے طویل وقفے کے بعد فیڈ کپ ٹیم میں واپسی ہوگئی ہے۔
آل انڈیا ٹینس ایسوسی ایشن (اے آئی ٹی اے) نے تین سے سات مارچ تک دبئی میں کھیلے جانے والے فیڈ کپ ایشیا اوشیانا زون گروپ اے ٹورنامنٹ کے لئے ہفتہ کو اعلان ہندستانی ٹیم میں ثانیہ کو نامزد کیا ہے۔ سابق ڈبلز نمبر ایک ثانیہ آخری بار 2016 میں فیڈ کپ میں کھیلی تھی اور اکتوبر 2017 سے زچگی کی چھٹی کی وجہ سے کورٹ سے باہر تھیں۔
33 سالہ ثانیہ نے اس سال جنوری میں ہوبارٹ انٹرنیشنل میں واپسی کی تھی اور خطاب بھی جیتا تھا لیکن پنڈلی کی چوٹ کی وجہ سے انہیں سال کے پہلے گرینڈ سلیم آسٹریلین اوپن کے پہلے راؤنڈ میں ریٹائر ہونا پڑا تھا۔
ہندستانی ٹیم میں سب سے زیادہ درجہ بندی والی کھلاڑی انکتا رینا ہے جو خاتون کی درجہ بندی میں 176 ویں نمبر پر ہیں۔ انکتا اور ثانیہ کے علاوہ ہندستان کو پلے آف میں لے جانے کی ذمہ داری ریا بھاٹیہ (349)، رتوجا بھونسلے (458) اور كرمن کور تھاڈي (587) پر رہے گی۔
سابق ڈیوس کپ کھلاڑی وشال اوپیل اس ٹیم کے کپتان ہیں جبکہ سابق فیڈ کپ کھلاڑی انکتا بھامبری اس ٹیم کی کوچ ہیں۔ اس ٹورنامنٹ میں ہندستان کے علاوہ چین، چینی تائی پے، انڈونیشیا، کوریا اور ازبکستان کے خلاف کھیلے گی۔ تمام ٹیموں نے اپنی تمام کھلاڑیوں کا اعلان کر دیا ہے۔

Continue Reading
Advertisement

رجحان

WP2Social Auto Publish Powered By : XYZScripts.com